28

ٹوٹا مکان

مجھے اُن تلخ یادوں کو بھلانا کیوں نہیں آتا؟
کہ دِل سے سب نشانوں کو مٹانا کیوں نہیں آتا؟

مجھے اچھے نہیں لگتے یہ چہرہ کیوں بھگوتے ہیں؟
مجھے ان بہتے اشکوں کو چھپانا کیوں نہیں آتا؟

میری پرواز میں حائل ہے کب سے گردشِ دوراں!
میرے پر اب نہیں ہلتے ٹھکانا کیوں نہیں آتا؟

مِرے خوابوں کی بستی کسقدر ویران کھنڈر ہے!
مجھے ٹوٹے مکانوں کو بنانا کیوں نہیں آتا؟

تِری تصویر میں عکس ہے جھانکتا اُن سارے لمحوں کا!
مجھے اِن سارے لمحوں کو جلانا کیوں نہیں آتا؟

کہاں سے لاؤں وہ الفاظ جو ہوں درد کی صورت!
مجھے رِستے ہوئے یہ زخم دکھانا کیوں نہیں آتا؟

– فرحان علی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.